Supreme Court 18

ہائیکورٹ کافیصلہ برقراررکھا توغلط مثال قائم ہوجائےگی،سپریم کورٹ، خیبرایجنسی میں گرلزکالج بنانے سے متعلق کیس میں ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار

اسلام آباد()سپریم کورٹ نے خیبرایجنسی میں گرلزکالج بنانے سے متعلق کیس میں ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دیدیا،عدالت نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ حکومت پالیسی اوروسائل کومدنظررکھتے ہوئے ڈگری کالج بنائے،ہائیکورٹ نے جو فیصلہ جاری کیا وہ درست نہیں،چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ ہائیکورٹ کافیصلہ برقراررکھا توغلط مثال قائم ہوجائےگی،ہم سپریم کورٹ میں کوئی غلط مثال قائم کرنانہیں چاہتے۔تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں خیبرایجنسی میں گرلزکالج بنانے سے متعلق درخواست پر سماعت ہوئی، چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے ویڈیولنک کے ذریعے پشاوررجسٹری میں کیس کی سماعت کی،عدالت نے ریمارکس دیئے کہ حکومت پالیسی اوروسائل کومدنظررکھتے ہوئے ڈگری کالج بنائے،ہائیکورٹ نے جو فیصلہ جاری کیا وہ درست نہیں،چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ ہائیکورٹ کافیصلہ برقراررکھا توغلط مثال قائم ہوجائےگی،ہم سپریم کورٹ میں کوئی غلط مثال قائم کرنانہیں چاہتے ،چیف جسٹس نے کہا کہ ہائیکورٹ کے فیصلے سے لگتاہے حکومت بے بس ہوگئی تھی،قبائلی علاقوں میں بچیوں کیلئے کالجزاورسکولزبنائے جائیں، کالجز اور سکولز بنانا حکومت کا کام ہے۔عدالت نے ہائیکورٹ کا فیصلہ کالعدم قراردے دیا ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں