64

اسلامیہ کالج یونیورسٹی پشاور نے ٹک ٹاک پر پابندی لگا دی

چین کی مشہور و معروف ایپ ٹک ٹاک کے استعمال پر اسلامیہ کالج یونیورسٹی نے پابندی لگا دی ہے۔ابتدائی طور پر 5 طلباء کو اپنے ٹک ٹاک اکاؤنٹس ڈیلیٹ کرنے کا کہا گیا ہے۔یونیورسٹی حکام نے یہ فیصلہ طالبعلموں میں ٹک ٹاک کے بڑھتے ہوئے استعمال کے بعد کیا ہے۔مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ طالبعلموں نے یونیورسٹی میں ٹک ٹاک کا استعمال بہت زیاد ہ کر دیا تھا جس کی وجہ سے ان کی تعلیمی سرگرمیاں متاثر ہو رہی تھیں۔
کسی بھی قسم کے تعلیمی نقصان سے بچنے کے لئے یونیورسٹی انتظامیہ نے ٹک ٹاک کے استعمال پر پابندی لگاتے ہوئے ابتدائی طور پر 5 طالبعلموں کو اپنے ٹک ٹاک اکاؤنٹس ڈیلیٹ کرنے کا حکم جاری کیا ہے۔ اس سے قبل وزیراعظم عمران خان کے بنائے گئے سیٹیزن پورٹل پر بھی ٹک ٹاک کو بند کرنے کے حوالے سے ایک شہری نے شکایت درج کی تھی اور تب بھی موقف اپنایا گیا تھا کہ ٹک ٹاک کی وجہ سے نوجوانوں کی تعلیمی سرگرمیاں بری طرح متاثر ہو رہی ہیں کیونکہ وہ ٹک ٹاک کو اپنی پڑھائی پر جیح دے رہے ہیں۔
ایسے واقعات بھی پیش آ چکے ہیں جس میں ٹک ٹاک ویڈیو بنانے کے جنون نے لوگوں کی جان لے لی ہے۔ گزشتہ مہینے بھارتی ریاست اتر پردیش میں بھی ایک ایسا ہی واقع پیش آیا تھا جس میں ایک18سالہ نوجوان نے خالی پستول سمجھ کر گولی چلائی لیکن اس میں گولی ہونی کی وجہ سے اس کی ٹک ٹاک ویڈیو اس کی موت کا سبب بن گئی۔ ایسے واقعات اور نوجوانوں کا تعلیمی اداروں میں ٹک ٹاک کے بہت زیادہ استعمال کودیکھتے ہوئے اسلامیہ کالج یونیورسٹی پشاور نے ٹک ٹاک کے استعمال پر پابندی لگانے کا فیصلہ کیا ہے اورابتدائی طور پر 5 طالبعلموں کو اپنے اکاؤنٹس ڈیلیٹ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں